کالا دھن سفید کرنے کی ایمنیسٹی اسکیم پر پیپلز پارٹی کی مخالفت

اسلام آباد: حکومت کی اقتصادی پالیسیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اپوزیشن جماعت پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی جانب سے اعلان کیا گیا ہے کہ وہ حکومت کی پاکستانیوں کے لیے غیر ملکی اثاثے ظاہر کرنے لیے مجوزہ کالا دھن سفید کرنے کی ایمنیسٹی اسکیم اور پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز (پی آئی اے) اور پاکستان اسٹیل ملز کی نجکاری کی تجاویز کی مخالفت کرے گی۔
پاکستان پیپلز پارٹی کی جانب سے پارلیمان میں نہ صرف حکومتی اقدام کی مخالفت کا اعلان کیا گیا بلکہ ساتھ ہی خبردار کیا گیا کہ اگر حکمران جماعت نے قومی اثاثوں کی نجکاری کے منصوبے پر عمل درآمد کی کوشش کی تو اس کے خلاف ملک گیر احتجاجی تحریک چلائی جائے گی۔
اس بارے میں ایک بیان میں پیپلز پارٹی کے سینیٹر اور سابق چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے رواں ماہ حکومت کی جانب سے ’کالا دھن سفید کرنے‘ کے لیے ایمنیسٹی اسکیم کے اعلان کے منصوبے پر تحفظات کا اظہار کیا تھا اور کہا تھا کہ یہ معاملہ انتہائی تشویشناک ہے اور پارلیمان میں اس کی مخالفت کی جائے گی۔
خیال رہے کہ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی جانب سے پہلے ہی اعلان کیا جا چکا ہے کہ حکومت پاکستانیوں کو اپنے غیر ملکی اثاثے ظاہر کرنے، ٹیکس بنیاد کو وسیع کرنے کے لیے ٹیکس شرح کو کم کرنے اور آئندہ سال کے بجٹ اور عام انتخابات سے قبل بیرونی اور مالیاتی چیلنجز کو دور کرنے کے لیے ایمنیسٹی اسکیم پیش کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔
تاہم رضا ربانی کا خیال ہے کہ ’اس طرح کی اسکیمز بڑے تاجروں کو غیر قانونی کام کرنے کا لائسنس اور ان کی غیر قانونی دولت کو قانونی کرنے کا موقع فراہم کرتی ہیں‘ جبکہ ماضی میں بھی اس طرح کی اسکیمیز ناکام رہی تھیں۔
ان کا کہنا تھا کہ بدقسمتی سے حکومت کی تمام اقتصادی پالیسیوں سے بڑے تاجروں کو فائدہ پہنچا اور متوسط طبقہ، پیشہ ورانہ اور کام کرنے والے لوگ اب بھی مہنگائی اور بالواسطہ اور بلاواسطہ محصولات کی چکی میں پس رہے ہیں۔
سابق چیئرمین سینیٹ کی جانب سے مشورہ دیا گیا کہ حکومت کی جانب سے بڑے تاجروں کے لیے ایمنیسٹی اسکیم کے اعلان کے بجائے کام کرنے والے طبقے، جن کا ماہانہ بجلی کا بل اوسطاً 7 ہزار ہے اور وہ 6 ماہ سے زائد اس کی ادائیگی نہیں کرسکتے، ایسے لوگوں کے لیے ایک وقتی ایمنیسٹی کا اعلان کرنا چاہیے۔
علاوہ ازیں ایک علیحدہ بیان میں پاکستان پیپلز پارٹی کے سیکریٹری جنرل نیئر بخاری کی جانب سے خبردار کیا گیا کہ حکومت پی آئی اے، اسٹیل ملز اور دیگر قومی اثاثوں کی نجکاری سے باز رہے۔
انہوں نے کہا اقتصادی امور کے مشیر مفتاح اسماعیل کے پی آئی اے اور اسٹیل ملز کے حوالے سے کیے گئے اعلان کی کبھی اجازت نہیں دی جائے گی اور قوم اور پیپلز پارٹی کی جانب سے اس عمل کی مخالفت کی جائے گی۔

مزید پڑھیں  اسلام اور جدیدیت (4) -- جمشید اقبال

اپنا تبصرہ بھیجیں