پشاور: ہسپتال میں مچھروں سے بھرا پراسرار تھیلا لانے کا واقعہ

پشاور: خیبرپختونخوا کے دارالحکومت پشاور کے حیات آباد میڈیکل کمپلکس میں پُرسرار بیماری پھیلانے کے لیے مچھر چھوڑے جانے کے انکشاف پر ہسپتال میں خوف ہراس پھیل گیا۔

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی رپورٹ کے مطابق ایک خاندان کے کچھ افراد حیات آباد میڈیکل کمپلکس میں داخل ہوئے اور ان کے ہاتھوں میں تھیلے تھے، جن میں مچھر موجود تھے۔

بعد ازاں یہ رپورٹ سوشل میڈیا سے خبروں کی زینت بن گئی، اس حوالے سے حیات آباد میڈیکل کمپلکس کے میڈیکل ڈائریکٹر سے رابطہ کیا گیا۔

مزید پڑھیں  پاناما جے آئی ٹی: وزیراعظم کی صاحبزادی مریم نواز طلب

ڈان نیوز کو مذکورہ واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے حیات آباد میڈیکل کمپلکس کے میڈیکل ڈائریکٹر شہزاد اکبر نے بتایا کہ ایک نوجوان تھیلے میں مچھر لے کر ہسپتال میں داخل ہوا تھا۔

تاہم انہوں نے مذکورہ مچھروں کو ڈینگی پھیلانے والے مچھر قرار نہیں دیا۔

مزید پڑھیں  گھر کا بھیدی لنکا ڈھائے

انہوں نے بتایا کہ نوجوان کی بہن ڈینگی کے مرض میں مبتلا ہوئی تھی تاہم بعد ازاں وہ صحت یاب ہوگئی۔

میڈیکل ڈائریکٹر نے بتایا کہ ہسپتال کے اسٹاف نے نوجوان کو پُر اسرار تھیلے کے ہمراہ پکڑ کر گارڈ کے حوالے کیا، جہاں 25 سالہ نوجوان سیف اللہ نے بتایا کہ وہ یہاں ان مچھروں کے بارے میں معلوم کرنے آیا تھا کہ آیا یہ ڈینگی پھیلانے والے مچھر ہیں یا نہیں۔

مزید پڑھیں  خدا کی قسم کوئی سیاسی ایجنڈا نہیں،خواہش ہے عوام کو روٹی اور صاف پانی مل جائے، چیف جسٹس

نوجوان کا کہنا تھا کہ وہ یہ جاننا چاہتا ہے کہ آیا یہ مچھر ڈینگی پھیلانے والے ہیں جبکہ اسے گاؤں میں کسی نے کہا تھا کہ اگر یہ ڈینگی پھیلانے والے مچھر ہوئے تو اسے اس کی قیمت ادا کی جائے گی۔

واضح رہے کہ یہ واقعہ 18 ستمبر کا ہے اور نوجوان کا تعلق پیش پہاڑا سے بتایا گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں