’’شیخ رشید مرد نہیں بلکہ لڑکی ‘‘

عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید نے کہا ہے کہ مجھے دکھ ہے پاکستان بنتے وقت میں جوان نہیں تھا۔ پیر کو راولپنڈی کے مقامی سکول میں یوم آزادی کی تقریب سے خطاب کررہے تھے ۔انہوں نے اپنے بچپن کی یادیں تازہ کرتے ہوئے کہا کہ ماں کہتی تھی کاش تم لڑکی ہوتے تمہاری شکایتیں نہ آتیں ٗمیری ماں کو محلے سے میری بہت شکایتیں ملتی تھیں۔شیخ رشید نے کہا مجھے دکھ ہے کہ پاکستان بنتے وقت میں جوان نہیں تھا ٗ اس بات پر میرے والد کہتے تھےتب بھی تو مسلم لیگ میں نہیں کانگریس میں ہوتا۔
شیخ رشید نے کہا کہ ہمارے لڑکے نکمے اور لڑکیاں قابل ہیں، لڑکوں کی تعلیم میں ناکامی کی یہ حالت رہی تو انہیں وظیفہ دینا پڑیگا۔بعد ازاں میڈیا سے گفتگو میں شیخ رشید نے کہا کہ نوازشریف کی دماغی کیفیت قابل رحم ہے وہ فیصلہ کرلیں کہ عدالت سے جھگڑا کرنا ہے یا حق لینا ہے۔انہوں نے کہا کہ عمران خان جب حدیبیہ پیپرملز کیس میں عدالت سے رجوع کریں گے تو ہم 2 دن بعد جائیں گے، ہم انتظار کررہے ہیں کہ نوازشریف کب ریویو میں جائیں گے۔ واضح رہے کہ شیخ رشید نے ابھی تک شادی نہیں کی ۔ ان کا مشہور قول ہے کہ دودھ جب باہر سے مل جاتا ہے تو گھر میں بھینس باندھنے کی کیا ضرورت ہے ؟

مزید پڑھیں  ‘سازش کرنے والوں کو سنگین غداری کے مقدمات کا سامنا کرنا پڑے گا‘

اپنا تبصرہ بھیجیں